Jo Tujhay Paekar E Sad Naaz O Ada Kehtay HaiN

جو تجھے پیکر صد ناز و ادا کہتے ہیں

جو تجھے پیکر صد ناز و ادا کہتے ہیں

قدرداں حسن کے یہ بات بجا کہتے ہیں

اس کے چہرے کی ضیا سے ہے چمک سورج کی

اس کی بکھری ہوئی زلفوں کو گھٹا کہتے ہیں

وہ جو آنکھوں سے پلائے تو چلو پی لیں گے

ویسے ہم پینے پلانے کو برا کہتے ہیں

سرخ ہاتھوں کی حقیقت تو ہمی جانتے ہیں

جو نہیں جانتے وہ رنگ حنا کہتے ہیں

بات اچھی ہی وہ کرتے ہیں ہمارے حق میں

جو ہمارے لیے کہتے ہیں بجا کہتے ہیں

سخت پتھریلی زمیں پر بھی کھلاتے ہیں گلاب

شعر ہم کہتے ہیں اور سب سے سوا کہتے ہیں

یہ روایت ہے زمانے کی نئی بات نہیں

ہوتی آئی ہے کہ اچھوں کو برا کہتے ہیں

آج گہوارے میں بیٹھے ہیں سبھی اہل ادب

اس فضا ہی کو محبت کی فضا کہتے ہیں

ہم نے کی مشق سخن مصرعۂ غالبؔ پہ ندیمؔ

لوگ اس بارے میں اب دیکھیے کیا کہتے ہیں

فرحت ندیم ہمایوں

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(465) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farhat Nadeem HumayuN, Jo Tujhay Paekar E Sad Naaz O Ada Kehtay HaiN in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 12 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farhat Nadeem HumayuN.