Jab Har Nazar Ho Khud Hi Tajalli Numa E Gham

جب ہر نظر ہو خود ہی تجلی نمائے غم

جب ہر نظر ہو خود ہی تجلی نمائے غم

پھر آدمی چھپائے تو کیسے چھپائے غم

اس وقت تک ملی نہ مجھے لذت حیات

جب تک رہا زمانے میں ناآشنائے غم

میری نگاہ شوق ہی غم کا سبب نہیں

ان کی نگاہ ناز بھی ہے رہنمائے غم

سودائے عشق درد محبت جفائے دوست

ہم نے خوشی کے واسطے کیا کیا اٹھائے غم

شاید یہ ہے کرشمہ فریب‌ نشاط کا

گھبرا کے آ گئی ہے لبوں پر دعائے غم

فرحتؔ کی ہر ہنسی میں ہیں آنسو چھپے ہوئے

اس کی خوشی بھی اوڑھے ہوئے ہے ردائے غم

فرحت قادری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(483) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farhat Qadri, Jab Har Nazar Ho Khud Hi Tajalli Numa E Gham in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 9 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farhat Qadri.