Aanch To Diye Ki Thi Sardiyoon Ki Shamon Main

آنچ تو دیئے کی تھی سردیوں کی شاموں میں

آنچ تو دیئے کی تھی سردیوں کی شاموں میں

ورنہ دھوپ کب اتری سردیوں کی شاموں میں

ہاتھ سے کبوتر تو پھر اڑا دیا میں نے

رہ گئی ہے تنہائی سردیوں کی شاموں میں

ہجر اور ہجرت کو اوڑھ کر بھی دیکھا ہے

مر گئی تھی اِک تتلی سردیوں کی شاموں میں

سرد گرم لمحوں کی آگ تاپتے تھے ہم

وہ جو اِک رسوئی تھی سریوں کی شاموں میں

آج دیر تک سُلگی تیری یاد کی خوشبو

دل کی بات دل سے تھی سردیوں کی شاموں میں

فرحت زاہد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(728) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farhat Zahid, Aanch To Diye Ki Thi Sardiyoon Ki Shamon Main in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love Urdu Poetry. Also there are 17 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farhat Zahid.