Do GhaRi BaeThay Thay Zulf E AmbreeN Ki ChhaoN MeiN

دو گھڑی بیٹھے تھے زلف عنبریں کی چھاؤں میں

دو گھڑی بیٹھے تھے زلف عنبریں کی چھاؤں میں

چبھ گیا کانٹا دل حسرت زدہ کے پاؤں میں

کم نہیں ہیں جب کہ شہروں میں بھی کچھ ویرانیاں

کس توقع پر کوئی جائے گا اب صحراؤں میں

کچی کلیاں پکی فصلیں سر چھپائیں گی کہاں

آگ شہروں کی لپک کر آ رہی ہے گاؤں میں

زخم نظارا ہیں جسموں کی برہنہ ٹہنیاں

ایسے پت جھڑ میں کھلیں گے پھول کیا آشاؤں میں

کیا کہوں طول شب غم پل میں صدیاں ڈھل گئیں

وقت یوں گزرا کہ جیسے آبلے ہوں پاؤں میں

زندگی میں ایسی کچھ طغیانیاں آتی رہیں

بہہ گئیں ہیں عمر بھر کی نیکیاں دریاؤں میں

جلتے موسم میں کوئی فارغ نظر آتا نہیں

ڈوبتا جاتا ہے ہر اک پیڑ اپنی چھاؤں میں

فارغ بخاری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1668) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farigh Bukhari, Do GhaRi BaeThay Thay Zulf E AmbreeN Ki ChhaoN MeiN in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farigh Bukhari.