Har Aik Rastay Ka Ham Safar Raha HuN MaiN

ہر ایک راستے کا ہم سفر رہا ہوں میں

ہر ایک راستے کا ہم سفر رہا ہوں میں

تمام عمر ہی آشفتہ سر رہا ہوں میں

قدم قدم پہ وہاں قربتیں تھیں اور یہاں

ہجوم شہر سے تنہا گزر رہا ہوں میں

پکارا جب مجھے تنہائی نے تو یاد آیا

کہ اپنے ساتھ بہت مختصر رہا ہوں میں

یہ کیسی رفعتیں آئینۂ نگاہ میں ہیں

کسی ستارے پہ جیسے اتر رہا ہوں میں

میں روشنی ہی کی وحدانیت کا قائل ہوں

محبتوں ہی کا پیغام بر رہا ہوں میں

میں شب پرست نہیں ہوں یہی خطا ہے مری

ادا شناس جمال سحر رہا ہوں میں

یہاں بس ایک نیا تجربہ ہوا فارغؔ

کہ لمحے لمحے کو محسوس کر رہا ہوں میں

فارغ بخاری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(562) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farigh Bukhari, Har Aik Rastay Ka Ham Safar Raha HuN MaiN in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farigh Bukhari.