Hoay HaiN Sard DamaghoN Kay Dehkay Dehkay Alao

ہوئے ہیں سرد دماغوں کے دہکے دہکے الاؤ

ہوئے ہیں سرد دماغوں کے دہکے دہکے الاؤ

نفس کی آنچ سے فکر و نظر کے دیپ جلاؤ

کرن کرن کو سیہ بدلیوں نے گھیر لیا ہے

تصورات کے دھندلے چراغو راہ دکھاؤ

کہاں ہے گردش دوراں کدھر ہے سیل حوادث

سکون‌ مرگ مسلسل میں ڈوبنے لگی ناؤ

کبھی خزاں کے بگولے کبھی بہار کے جھولے

سمجھ سکے نہ زمانے کے یہ اتار چڑھاؤ

عجیب سا ہے خرابات کے فقیہوں کا فتویٰ

بھڑکتے شعلوں سے تپتے دلوں کی پیاس بجھاؤ

ہزار گردنیں خم ہوں برا نہیں پہ ستم ہے

خیال و فکر کی پستی نگاہ و دل کا جھکاؤ

فارغ بخاری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(624) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farigh Bukhari, Hoay HaiN Sard DamaghoN Kay Dehkay Dehkay Alao in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farigh Bukhari.