Kuch Ab Ke Baharoon Ka Bhi Andaz Naya Hai

کچھ اب کے بہاروں کا بھی انداز نیا ہے

کچھ اب کے بہاروں کا بھی انداز نیا ہے

ہر شاخ پہ غنچے کی جگہ زخم کھلا ہے

دو گھونٹ پلا دے کوئی مے ہو کہ ہلاہل

وہ تشنہ لبی ہے کہ بدن ٹوٹ رہا ہے

اس رند سیہ مست کا ایمان نہ پوچھو

تشنہ ہو تو مخلوق ہے پی لے تو خدا ہے

کس بام سے آتی ہے تری زلف کی خوشبو

دل یادوں کے زینے پہ کھڑا سوچ رہا ہے

کل اس کو تراشو گے تو پوجے گا زمانہ

پتھر کی طرح آج جو راہوں میں پڑا ہے

دیوانوں کو سودائے طلب ہی نہیں ورنہ

ہر سینے کی دھڑکن کسی منزل کی صدا ہے

فارغ بخاری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1534) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farigh Bukhari, Kuch Ab Ke Baharoon Ka Bhi Andaz Naya Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farigh Bukhari.