Social Poetry of Farigh Bukhari - Social Shayari

فارغ بخاری کی معاشرتی شاعری

نشے میں جو ہے کہنہ شرابوں سے زیادہ

Nashay Main Jo Hai Kahna Sharabon Say Ziyada

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

تیری خاطر یہ فسوں ہم نے جگا رکھا ہے

Teri Khatir Yeh Fasoon Hum Nay Jaga Rakha Hai

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

کچھ نہیں گرچہ تری راہ گزر سے آگے

Kuch Nahi Grchah Tri Raah Guzar Say Agay

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

کوئی منظر بھی سہانا نہیں رہنے دیتے

Koi Manzar Bhi Suhana Nahi Rehne Dete

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

یاد آئیں گے زمانے کو مثالوں کے لیے

Yaad Ayen Ge Zamanay Ko Misalon Ke Liye

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

یادوں کا عجیب سلسلہ ہے

Yaado Ka Ajeeb Silsila Hai

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

نشے میں جو ہے کہنہ شرابوں سے زیادہ

Nashshay Mein Jo Hae Kohna Sharabon Se Zeyada

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

وہ روشنی ہے کہاں جس کے بعد سایا نہیں

Woh Roshni Hae Kahan Jis Kay Baad Saya Nahin

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

ہوئے ہیں سرد دماغوں کے دہکے دہکے الاؤ

Hoay Hain Sard Damaghon Kay Dehkay Dehkay Alao

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

وہ روز و شب بھی نہیں ہے وہ رنگ و بو بھی نہیں

Woh Roz O Shab Bhi Nahin Hae Woh Rang O Boo Bhi Nahin

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

ہر ایک راستے کا ہم سفر رہا ہوں میں

Har Aik Rastay Ka Ham Safar Raha Hun Main

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

میں کہ اب تیری ہی دیوار کا اک سایا ہوں

Main Keh Ab Teri Hi Deewar Ka Ik Saaya Hun

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

دو گھڑی بیٹھے تھے زلف عنبریں کی چھاؤں میں

Do Ghari Baethay Thay Zulf E Ambreen Ki Chhaon Mein

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

دل کے گھاؤ جب آنکھوں میں آتے ہیں

Dil Kay Ghao Jab Ankhon Mein Aatay Hain

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

جبیں کا چاند بنوں آنکھ کا ستارا بنوں

Jabeen Ka Chand Banon Ankh Ka Sitara Banon

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

کیا عدو کیا دوست سب کو بھا گئیں رسوائیاں

Kia Adoo Kia Dost Sab Ko Bha Gain Ruswaian

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

میں شعلۂ اظہار ہوں کوتاہ ہوں قد تک

Main Shola E Izhar Hun Kotaah Hun Qad Tak

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

رنگ در رنگ حجابات اٹھانے ہوں گے

Rang Dar Rang Hijabat Othanay Hun Ge

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

دیکھے کوئی جو چاک گریباں کے پار بھی

Dekhay Koi Jo Chaak Greban Kay Paar Bhi

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

خرد بھی نا مہرباں رہے گی شعور بھی سر گراں رہے گا

Khud Bhi Na Mehrbaan Rahay Gishaoor Bhi Sar Garan Rahay Ga

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

اظہار عقیدت میں کہاں تک نکل آئے

Izhaar E Aqeedat Mein Kahan Tak Nikal Aey

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

یہی ہے دور غم عاشقی تو کیا ہوگا

Yehi Hae Daor E Gham E Aashiqi Tu Kia Hoga

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

ہمیں سلیقہ نہ آیا جہاں میں جینے کا

Hamen Saleeqa Na Aaya Jahan Mein Jeenay Ka

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

مسیح وقت سہی ہم کو اس سے کیا لینا

Maseeh E Waqt Sahi Hum Ko Os Se Kia Lena

(Farigh Bukhari) فارغ بخاری

Records 1 To 24 (Total 36 Records)

Social Shayari of Farigh Bukhari - Poetry of Social. Read the best collection of Social poetry by Farigh Bukhari, Read the famous Social poetry, and Social Shayari by the poet. Social Nazam and Social Ghazals of the poet. The best collection of Shayari by Farigh Bukhari online. You can also read different types of poetries by the poet including Social Shayari from different books of the poet.