Woh Roz O Shab Bhi NahiN Hae Woh Rang O Boo Bhi NahiN

وہ روز و شب بھی نہیں ہے وہ رنگ و بو بھی نہیں

وہ روز و شب بھی نہیں ہے وہ رنگ و بو بھی نہیں

وہ بزم جام و سبو بھی نہیں وہ تو بھی نہیں

نہ دل دھڑکتے ہیں مل کر نہ آنکھیں جھکتی ہیں

لہو کی گردشیں اب مثل آب جو بھی نہیں

کبھی کبھی کی ملاقات تھی سو وہ بھی گئی

تری نگاہ کا رنگ بہانہ جو بھی نہیں

کب آفتاب ڈھلے اور چاندنی چھٹکے

کسی کو اب یہ سر شام جستجو بھی نہیں

بس اب تو یاد سے ہی زندگی عبارت ہے

کہاں کا وعدہ کہ ملنے کی آرزو بھی نہیں

کہ جیسے بھیگے پروں سے اڑانیں چھن جائیں

دلوں کی سوزش بے نام کو بہ کو بھی نہیں

وہ جس کی گرمی قیامت اٹھا رہی تھی کبھی

اسی بدن کا جو کاٹو تو اب لہو بھی نہیں

لگی ہے تیس برس سے ہمارے خوں کی جھڑی

مگر ابھی شجر دار سرخ رو بھی نہیں

میں سوچتا ہوں جئیں بھی تو کس لیے فارغؔ

کہ اب تو شہر میں پہلی سی آبرو بھی نہیں

فارغ بخاری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(902) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farigh Bukhari, Woh Roz O Shab Bhi NahiN Hae Woh Rang O Boo Bhi NahiN in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farigh Bukhari.