Kohsar Ka Khoogar Hae Na Paband E GulistaN

کوہسار کا خوگر ہے نہ پابند گلستاں

کوہسار کا خوگر ہے نہ پابند گلستاں

آزاد ہے ہر قید مقامی سے مسلماں

گھر کنج قفس کو بھی بنا لیتی ہے بلبل

شاہیں کی نگاہوں میں نشیمن بھی ہے زنداں

اللہ کے بندوں کی ہے دنیا ہی نرالی

کانٹے کوئی بوتا ہے تو اگتے ہیں گلستاں

کہہ دو یہ قیامت سے دبے پاؤں گزر جائے

کچھ سوچ رہا ہے ابھی بھارت کا مسلماں

اے شیخ حرم آج ترا فیصلہ کیا ہے

صف بندئ مسجد کہ صف آرائی میداں

سینے میں شکم لے کے ابھرتی ہیں جو قومیں

بن جاتی ہیں آخر میں خود آزوقۂ دوراں

چلتی ہوئی اک بات ہے نا معتبر اک چیز

نا اہل کی دولت ہو کہ نادار کا ایماں

ملا کا یہ فتویٰ ہے کہ فاروقؔ ہے ملحد

اے دین محمد ترا اللہ نگہباں

فاروق بانسپاری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(737) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farooq Banspari, Kohsar Ka Khoogar Hae Na Paband E GulistaN in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 7 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farooq Banspari.