Dheeray Dheeray Sham Ka AnkhoN MeiN Har Manzar Bujha

دھیرے دھیرے شام کا آنکھوں میں ہر منظر بجھا

دھیرے دھیرے شام کا آنکھوں میں ہر منظر بجھا

اک دیا روشن ہوا تو اک دیا اندر بجھا

وہ تو روشن قمقموں کے شہر میں محصور تھا

سخت حیرت ہے کہ ایسا آدمی کیوں کر بجھا

اس سیہ خانے میں تجھ کو جاگنا ہے رات بھر

ان ستاروں کو نہ بے مقصد ہتھیلی پر بجھا

ذہن کی آوارگی کو بھی پناہیں چاہیے

یوں نہ شمعوں کو کسی دہلیز پر رکھ کر بجھا

اور بھی گھر تھے ہوا کی زد پہ بستی میں شفقؔ

میرے ہی گھر کا دیا طوفان میں اکثر بجھا

فاروق شفق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(655) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farooq Shafaq, Dheeray Dheeray Sham Ka AnkhoN MeiN Har Manzar Bujha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 18 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farooq Shafaq.