Din Ko Thay Hum Ik Tasawwur Raat Ko Ik Khwaab Thay

دن کو تھے ہم اک تصور رات کو اک خواب تھے

دن کو تھے ہم اک تصور رات کو اک خواب تھے

ہم سمندر ہو کے بھی اس کے لئے پایاب تھے

سرد سے مرمر پہ شب کو جو ابھارے تھے نقوش

صبح کو دیکھا تو سب عکس ہنر نایاب تھے

وہ علاقے زندگی بھر جو نمی مانگا کئے

کل گھٹائیں چھائیں تو دیکھا کہ زیر آب تھے

اک کرن بھی عہد میں ان کے نہ بھولے سے ملی

دن کے جو سورج تھے اپنے رات کے مہتاب تھے

آج ان پیڑوں پہ سورج کی کرن رکتی نہیں

کل یہی تھے بار آور کل یہی شاداب تھے

اب کھلا کہ بوندیاں موتی ہیں ڈھلتی تھیں کہاں

ہم جو ڈوبے ہاتھ اپنے گوہر نایاب تھے

کوئی اپنی بھی حقیقت مل کے دریا سے شفقؔ

چھوٹے چھوٹے اپنے نالے کس قدر بیتاب تھے

فاروق شفق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(523) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farooq Shafaq, Din Ko Thay Hum Ik Tasawwur Raat Ko Ik Khwaab Thay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 18 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farooq Shafaq.