KhiRkioN Par Malgajay Saey Say Lehranay Lagay

کھڑکیوں پر ملگجے سائے سے لہرانے لگے

کھڑکیوں پر ملگجے سائے سے لہرانے لگے

شام آئی پھر گھروں میں لوگ گھبرانے لگے

شہر کا منظر ہمارے گھر کے پس منظر میں ہے

اب ادھر بھی اجنبی چہرے نظر آنے لگے

دھوپ کی قاشیں ہرے مخمل پہ ضو دینے لگیں

سائے کمروں سے نکل کر صحن میں آنے لگے

جگنوؤں سے سج گئیں راہیں کسی کی یاد کی

دن کی چوکھٹ پر مسافر شام کے آنے لگے

بوندیاں برسیں ہوا کے بادباں بھی کھل گئے

نیلے پیلے پیرہن سڑکوں پہ لہرانے لگے

سوچتے ہیں کاٹ دیں آنگن کے پیڑوں کو شفقؔ

گھر کی باتیں یہ گلی کوچے میں پھیلانے لگے

فاروق شفق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(595) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farooq Shafaq, KhiRkioN Par Malgajay Saey Say Lehranay Lagay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 18 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farooq Shafaq.