YuN Bhi Hota Hae Keh Apnay Aap Awaz Dena PaRti Hae

یوں بھی ہوتا ہے کہ اپنے آپ آواز دینا پڑتی ہے

دنیا بے صفتی کی آنکھ سے دیکھ

یہ تکوین، ،زمان زمینیں،

مستی اور لگن کی لیلا

اک بہلاوا ہے

اس بہلاوے میں اک دستاویز ہے

جس کا اول آخر

پھٹا ہوا ہے

دودھیا روشن

شاہراہوں پر

کتنے یگ تھے

جن میں خاموشی کے لمبے لمبے سکتے ہیں

بارش اور ماٹی کا ذکر نہیں

پھر بھی ہم نے

معنی اور امکان کی بے ترتیبی میں

ادھر ادھر سے

زندہ رہنے کا سامان کیا

خوابوں کے گدلے پانی میں مچھلی دیکھ کے

حرف بنائے

اور چکنی مٹی کی مورت پر

دو آنکھیں رکھیں

گھٹتی بڑھتی دنیاؤں تک

مستی اور لگن کی لیلا میں

اب حرف ہمارے دلوں کو روشن رکھتے ہیں

لیکن جرعہ جرعہ

عمروں کے دالان میں

اپنے آپ کو بے خبری سے

بھرنا پڑتا ہے

نیلی چھت

ٹھنڈی رکھنے کو

تن من نیلا کرنا پڑتا ہے!!

فرخ یار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1208) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farrukh Yar, YuN Bhi Hota Hae Keh Apnay Aap Awaz Dena PaRti Hae in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 13 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farrukh Yar.