Day Gaya Likh Kar Woh Bas Itna Juda Hotay Hoay

دے گیا لکھ کر وہ بس اتنا جدا ہوتے ہوئے

دے گیا لکھ کر وہ بس اتنا جدا ہوتے ہوئے

ہو گئے بے آسرا ہم آسرا ہوتے ہوئے

کھڑکیاں مت کھول لیکن کوئی روزن وا تو کر

گھٹ نہ جائے میرا دم تازہ ہوا ہوتے ہوئے

وقت نے گردن اٹھانے کی نہ دی مہلت ہمیں

اپنا چہرہ بھول بیٹھے آئینہ ہوتے ہوئے

خود اسی کے عہد میں عزم وفاداری نہ تھا

ورنہ کیوں مجھ سے بدلتا آشنا ہوتے ہوئے

گردش دوراں کا ہم پر بھی اثر ہوتا ضرور

ہم نے دیکھا ہے مگر اس کو خفا ہوتے ہوئے

جانے کس کے سوگ میں یہ شہر ہے ڈوبا ہوا

مے کدے سنسان ہیں کالی گھٹا ہوتے ہوئے

فصیح اکمل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1125) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fasih Akmal, Day Gaya Likh Kar Woh Bas Itna Juda Hotay Hoay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 16 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fasih Akmal.