KitaboN Se Na Danish Ki Farawani Se Aaya Hae

کتابوں سے نہ دانش کی فراوانی سے آیا ہے

کتابوں سے نہ دانش کی فراوانی سے آیا ہے

سلیقہ زندگی کا دل کی نادانی سے آیا ہے

تم اپنے حسن کے جلووں سے کیوں شرمائے جاتے ہو

یہ آئینہ مری آنکھوں کی حیرانی سے آیا ہے

الجھنا خود سے رہ رہ کر نظر سے گفتگو کرنا

یہ انداز سخن اس کو نگہبانی سے آیا ہے

ندی ہے موج میں اپنی اسے اس کی خبر کیا ہے

کہ تشنہ لب مسافر کس پریشانی سے آیا ہے

ستاروں کی طرح الفاظ کی ضو بڑھتی جاتی ہے

غزل میں حسن اس چہرے کی تابانی سے آیا ہے

فصیح اکمل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(952) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fasih Akmal, KitaboN Se Na Danish Ki Farawani Se Aaya Hae in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 16 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fasih Akmal.