Samandar Sar PaTak Kar Mar Raha Tha

سمندر سر پٹک کر مر رہا تھا

سمندر سر پٹک کر مر رہا تھا

تو میں جینے کی کوشش کر رہا تھا

کسی سے بھی نہیں تھا خوف مجھ کو

میں اپنے آپ ہی سے ڈر رہا تھا

گزارش وقت سے میں نے نہ کی تھی

کہ میرا زخم خود ہی بھر رہا تھا

ہزاروں سال کی تھی آگ مجھ میں

رگڑنے تک میں اک پتھر رہا تھا

تجھے اس دن کی چوٹیں یاد ہوں گی

مجھے پہچان، تیرے گھر رہا تھا

ف س اعجاز

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(665) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fay Seen Ejaz, Samandar Sar PaTak Kar Mar Raha Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 24 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fay Seen Ejaz.