Boalhos Kaam Fehem Hai Wo Aadmi Nadan Hai

بوالہوس کم فہم ہے وہ آدمی نادان ہے

بوالہوس کم فہم ہے وہ آدمی نادان ہے

جو یہ سمجھا عشق کچھ مشکل نہیں آسان ہے

کب میں کہتا ہوں کہ میری جان میری جان ہے

آپ کی ہے بندہ پرور آپ پر قربان ہے

بے خودی کے بعد کیا گزری نہیں کچھ بھی خبر

جلوہ گاہ ناز تک پہنچا بس اتنا دھیان ہے

کس کے جلوے سے ہے بے خود انجمن کی انجمن

ہر بشر تصویر ہے ہر آئنہ حیران ہے

مصحف رخسار جاناں پر نمود خط نہیں

دیکھنے والو یہ ہے تفسیر وہ قرآن ہے

اس جگہ پہنچا جہاں قدسی بھی جا سکتے نہیں

در حقیقت آدمی کی شان بھی کیا شان ہے

اس کے بندے بندگی کرتے ہیں لیکن اے بتو

تم خدائی کر رہے ہو یہ خدا کی شان ہے

کیا چھپوگے تم وہاں وہ کچھ تمہارا گھر نہیں

حشر کا میدان آخر حشر کا میدان ہے

آرزو مٹنے کی تھی راہ طلب میں مٹ چکے

اور اب اے حضرت دل کہیے کچھ ارمان ہے

آدمی تو سب ہی کہلاتے ہیں لیکن خلق میں

اس کا رتبہ اور ہے جو آدمی انسان ہے

صابرؔ عاصی کے عصیاں کیوں نہ بخشے گا خدا

وہ بڑا غفار ہے ستار ہے رحمان ہے

فضل حسین صابر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(359) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fazal Husain Sabir, Boalhos Kaam Fehem Hai Wo Aadmi Nadan Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 34 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fazal Husain Sabir.