Pocho Na Yeh Faraq Main Kiya Tera Haal Hai

پوچھو نہ یہ فراق میں کیا تیرا حال ہے

پوچھو نہ یہ فراق میں کیا تیرا حال ہے

مرنا کمال سہل ہے جینا محال ہے

یہ حسن حور کا نہ پری کا جمال ہے

خوبان دہر میں تو عدیم المثال ہے

اے جذب عشق صرف یہ تیرا کمال ہے

ان کا مجھے خیال انہیں میرا خیال ہے

بیمار درد و غم کی حقیقت نہ پوچھئے

کل اور حال اس کا تھا آج اور حال ہے

اک چودھویں کے چاند پر ہی منحصر نہیں

یوں ہی ہر ایک شے کو عروج و زوال ہے

واقف ہیں مہر و مہ کی حقیقت سے خوب ہم

اس میں ترا جلال ہے اس میں جمال ہے

مریخ کانپتا ہے تمہارے جلال سے

تم سے ملائے آنکھ یہ کس کی مجال ہے

کر دوں گا سرد نار جہنم کو حشر میں

کافی اسے مرا عرق انفعال ہے

اس سرو قد کے قد سے ہے جس آدمی کو عشق

سرسبز ہے وہ باغ جہاں میں نہال ہے

اے شیخ سلسبیل ہو یا ہو دو آتشہ

پینا کوئی حرام نہیں ہے حلال ہے

صابرؔ ترا کلام سنیں کیوں نہ اہل فن

بندش عجب ہے اور عجب بول چال ہے

فضل حسین صابر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(461) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fazal Husain Sabir, Pocho Na Yeh Faraq Main Kiya Tera Haal Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 34 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fazal Husain Sabir.