Aa Kay Ho Ja Bay Libas

آ کے ہو جا بے لباس

دن جو کہتا ہے مت سن

دھوپ کاندھوں پر اٹھانے سے بھی ہٹ جا

ڈھیر سے غصے کو اپنی مٹھیوں میں بھر کے لے آ

شہر بھر کے منہ پہ مل دے

ہر طرف کالک ہی کالک پوت دے دیوار و در پر

دن کے سب آثار ڈھا دے

نوچ لے آکاش سے جلتے ہوئے خورشید کو

دھوپ کی چادر کو کر دے تار تار

اور پھر گھر آ کے ہو جا بے لباس

بند ہو جا گھر کی اندھی کوٹھری میں

بند رہ لمبے سمے تک

جب تلک سورج ترے اپنے ہی کالے غار سے

باہر نہ جھانکے بند رہ

دھوپ جب تک کوڑھ کی صورت ترے کالے بدن کو

پھوڑ کر باہر نہ نکلے بند رہ

جب تلک غصے کا کالا جھاگ تجھ میں کھو نہ جائے

بند رہ بند رہ لمبے سمے تک

یہ غلط فہمی کہ تیرے بند رہنے سے

یہاں کچھ کم ہوا ہے بھول جا

بھیڑ کے اتنے بڑے جنگل میں

کب کچھ کم ہوا ہے

فضل تابش

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1789) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fazal Tabish, Aa Kay Ho Ja Bay Libas in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 19 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fazal Tabish.