Gham JanaN Se RangeeN Aor Koi Gham NahiN Hota

غم جاناں سے رنگیں اور کوئی غم نہیں ہوتا

غم جاناں سے رنگیں اور کوئی غم نہیں ہوتا

کہ اس کے درد میں احساس بیش و کم نہیں ہوتا

وہ ہیں کم ظرف جن کا شور نالہ کم نہیں ہوتا

چمن میں پھول بھی تو ہیں انہیں کیا غم نہیں ہوتا

کمال ضبط گریہ عظمت شان محبت ہے

چھلک جائے جو پیمانہ وہ جام جم نہیں ہوتا

یہاں تک دل کو عادت ہو گئی ہے بے قراری کی

سکون زندگی میں بھی تڑپنا کم نہیں ہوتا

تمہاری یاد ہی کے ساتھ دھڑکن بڑھ گئی دل کی

تصور سے مزاج حسن تو برہم نہیں ہوتا

خزاں کی الجھنیں گلچیں کا کھٹکا ہے مگر پھر بھی

کلی کا باغ میں لطف تبسم کم نہیں ہوتا

کچھ ایسی بات ہے صیاد جو ہم مسکراتے ہیں

نہیں تو آشیاں لٹنے کا کس کو غم نہیں ہوتا

نہ جانے کیوں تمہارے غم کو دنیا غم سمجھتی ہے

مسرت سے تو اس کا مرتبہ کچھ کم نہیں ہوتا

فگارؔ اس گلشن ہستی کا عبرت خیز عالم ہے

کہ شبنم رو رہی ہے گل کا ہنسنا کم نہیں ہوتا

فگار اناوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1580) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Figar Unnavi, Gham JanaN Se RangeeN Aor Koi Gham NahiN Hota in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Social Urdu Poetry. Also there are 16 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Figar Unnavi.