Ishq Ki Mayusion Main Soaz Panhan Kuch Nahi

عشق کی مایوسیوں میں سوز پنہاں کچھ نہیں

عشق کی مایوسیوں میں سوز پنہاں کچھ نہیں

اس ہوا میں یہ چراغ زیر داماں کچھ نہیں

کیا ہے دیکھو حسرت سیر گلستاں کچھ نہیں

کچھ نہیں اے ساکنان کنج زنداں کچھ نہیں

عشق کی ہے خود نمائی عشق کی آشفتگی

روئے تاباں کچھ نہیں زلف پریشاں کچھ نہیں

یاد آ ہی جاتی ہے اکثر دل برباد کی

یوں تو سچ ہے چند ذرات پریشاں کچھ نہیں

سچ ہے جو کچھ بھی ہے وہ ہے گرمیٔ بازار حسن

اہل دل کا سوز پنہاں کچھ نہیں ہاں کچھ نہیں

اور ان کی زندگی ہے اور عنوان حیات

خود فراموشوں کو تیرے عہد و پیماں کچھ نہیں

ایک ہو جائے نہ جب تک سرحد ہوش و جنوں

ایک ہو کر چاک دامان و گریباں کچھ نہیں

جو نہ ہو جائے وہ کم ہے جو بھی ہو جائے بہت

کارزار عشق میں دشوار و آساں کچھ نہیں

دیکھنی تھی دیکھ لی اس چھیڑ کی بھی سادگی

بے دلوں میں یہ تبسم ہائے پنہاں کچھ نہیں

کاش اپنے درد سے بیتاب ہوتے اے فراقؔ

دوسرے کے ہاتھوں یہ حال پریشاں کچھ نہیں

فراق گورکھپوری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2469) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Firaq Gorakhpuri, Ishq Ki Mayusion Main Soaz Panhan Kuch Nahi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 69 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Firaq Gorakhpuri.