Samajhta Hon Ke To Mujh Se Juda Hai

سمجھتا ہوں کہ تو مجھ سے جدا ہے

سمجھتا ہوں کہ تو مجھ سے جدا ہے

شب فرقت مجھے کیا ہو گیا ہے

ترا غم کیا ہے بس یہ جانتا ہوں

کہ میری زندگی مجھ سے خفا ہے

کبھی خوش کر گئی مجھ کو تری یاد

کبھی آنکھوں میں آنسو آ گیا ہے

حجابوں کو سمجھ بیٹھا میں جلوہ

نگاہوں کو بڑا دھوکا ہوا ہے

بہت دور اب ہے دل سے یاد تیری

محبت کا زمانہ آ رہا ہے

نہ جی خوش کر سکا تیرا کرم بھی

محبت کو بڑا دھوکا رہا ہے

کبھی تڑپا گیا ہے دل ترا غم

کبھی دل کو سہارا دے گیا ہے

شکایت تیری دل سے کرتے کرتے

اچانک پیار تجھ پر آ گیا ہے

جسے چونکا کے تو نے پھیر لی آنکھ

وہ تیرا درد اب تک جاگتا ہے

جہاں ہے موجزن رنگینیٔ حسن

وہیں دل کا کنول لہرا رہا ہے

گلابی ہوتی جاتی ہیں فضائیں

کوئی اس رنگ سے شرما رہا ہے

محبت تجھ سے تھی قبل از محبت

کچھ ایسا یاد مجھ کو آ رہا ہے

جدا آغاز سے انجام سے دور

محبت اک مسلسل ماجرا ہے

خدا حافظ مگر اب زندگی میں

فقط اپنا سہارا رہ گیا ہے

محبت میں فراقؔ اتنا نہ غم کر

زمانے میں یہی ہوتا رہا ہے

فراق گورکھپوری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(301) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Firaq Gorakhpuri, Samajhta Hon Ke To Mujh Se Juda Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 69 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Firaq Gorakhpuri.