Odhar

ادھار

ہم کو ملازمت جو کھڑے گھاٹ مل گئی

باچھوں کی ناؤ کانوں کے ساحل سے جا لگی

چٹھی پھر ان کو ہم نے بصد شوق یوں لکھی

''آیا کرو ادھر بھی مری جاں کبھی کبھی''

دل نے کہا کہ جھوم کے نعرے لگائیے

تختی لگا کے پیٹھ سے اب گھوم جائیے

آ جائیے تو مل کے مہاجن کو لوٹ لیں

قرضہ وہ لیں کہ اصل کبھی دیں نہ سود دیں

وہ قرض پھر لیے ہیں کہ اللہ کی پناہ!

روپے اسی سے لیں مری جس پر پڑی نگاہ

پھر اس کے بھاگنے کی بھی چھوڑی نہ کوئی راہ

سب کے لنگوٹی بندھ گئی، حالت ہوئی تباہ

یارا نہ تھا فغاں کا، نہ موقع تھا آہ کا

پتا پھٹا ہوا تھا ہر ایک قرض خواہ کا

قرضے پہ ہم نے ایک مکان ایسا لے لیا

جس میں کہ دو طرف سے تھا جانے کا راستہ

جب سارے قرض خواہوں کو اس کا پتہ چلا

ہر فرد لے کے اپنا بہی کھاتا آ گیا

تھا ہر طرف سے شور کہ تشریف لائیے

سناٹا کہہ رہا تھا کہ ڈنڈے بجائیے

پہلی جو آئی ایک قیامت مچا گئی

بل لے کے قرض خواہوں کی اک فوج آ گئی

ہر قرض خواہ حد ادب لانگنے لگا

دل اپنی مغفرت کی دعا مانگنے لگا

ہر سمت لاد لاد کے گرنے لگے جو بم

گرمایا دل تو آیا طبیعت میں پیچ و خم

رہ رہ کے اپنی بوٹیاں ہم نوچنے لگے

اور خودکشی کی راہ نئی سوچنے لگے

ہے قرض کی یہ شان کہ لو اور کبھی نہ دو

دس بیس ہاتھ کھاؤ تو دو چار خود دھرو

مرنے پہ قرض خواہوں کے چندے سے یوں اٹھو

دمڑی نہ اپنی خرچ ہو اس ٹھاٹھ سے مرو

چھ سات سال قرض کے پیسے نہ جب دئیے

دس بیس سود خوار تو یونہی ڈھلک گئے

جو ادھ موئے تھے وہ بھی تھے کچھ ایسے کج روے

بے صبر ہو کے بولے حضرت ہم تو اب چلے

وہ ہم نے قرض خواہوں کی مٹی پلید کی

وہ خود تو مر گئے پہ رقم ان کی رہ گئی

فرقت کاکوروی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1186) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Furqat Kakorvi, Odhar in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 4 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Furqat Kakorvi.