Naomeed Karay Dil Ko Na Manzil Ka Pata Day

نومید کرے دل کو نہ منزل کا پتا دے

نومید کرے دل کو نہ منزل کا پتا دے

اے رہ گزر عشق ترے کیا ہیں ارادے

ہر رات گزرتا ہے کوئی دل کی گلی سے

اوڑھے ہوئے یادوں کے پر اسرار لبادے

بن جاتا ہوں سر تا بہ قدم دست تمنا

ڈھل جاتے ہیں اشکوں میں مگر شوق ارادے

اس چشم فسوں گر میں نظر آتی ہے اکثر

اک آتش خاموش کہ جو دل کو جلا دے

آزردۂ الفت کو غم زندگی جیسے

تپتے ہوئے جنگل میں کوئی آگ لگا دے

یادوں کے مہ و مہر تمناؤں کے بادل

کیا کچھ نہ وہ سوغات سر دشت وفا دے

یاد آتی ہے اس حسن کی یوں جعفریؔ جیسے

تنہائی کے غاروں سے کوئی خود کو صدا دے

فضیل جعفری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(388) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fuzail Jafry, Naomeed Karay Dil Ko Na Manzil Ka Pata Day in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 32 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fuzail Jafry.