Zindagi Se Umar Bhar Tak Chalne Ka Wada Kya

زندگی سے عمر بھر تک چلنے کا وعدہ کیا

زندگی سے عمر بھر تک چلنے کا وعدہ کیا

اے مری کمبخت سانسو ہائے تم نے کیا کیا

ابتدائے ہوش سے اچھا بھلا پتھر تھا میں

اک نظر بس دیکھ کر تو نے مجھے دریا کیا

ایک بس خاموش سے لمحہ کی خواہش ہی تو تھی

اور اسی خواہش نے لیکن شور پھر کتنا کیا

لطف اب دینے لگی ہے یہ اداسی بھی مجھے

شکریہ تیرا کہ تو نے جو کیا اچھا کیا

سوچتا ہوں کون سے الزام اور اب رہ گئے

ہاں تجھے چاہا تجھے پوجا ترا سجدا کیا

دی نہیں تصویر اپنی تو نے دیوانے کو جب

یوں کیا واللہ اس نے خود کو ہی تجھ سا کیا

کب تلک آخر یہ سہتی رہتی خوابوں کی تپش

تنگ آ کر نیند نے پلکوں سے لو توبہ کیا

گوتم راج رشی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(581) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of GAUTAM RAJRISHI, Zindagi Se Umar Bhar Tak Chalne Ka Wada Kya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 12 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of GAUTAM RAJRISHI.