Apni Nazar Main Bhi Tu Wo Apna Nahi Raha

اپنی نظر میں بھی تو وہ اپنا نہیں رہا

اپنی نظر میں بھی تو وہ اپنا نہیں رہا

چہرے پہ آدمی کے ہے چہرہ چڑھا ہوا

منظر تھا آنکھ بھی تھی تمنائے دید بھی

لیکن کسی نے دید پہ پہرہ بٹھا دیا

ایسا کریں کہ سارا سمندر اچھل پڑے

کب تک یوں سطح آب پہ دیکھیں گے بلبلہ

برسوں سے اک مکان میں رہتے ہیں ساتھ ساتھ

لیکن ہمارے بیچ زمانوں کا فاصلہ

مجمع تھا ڈگڈگی تھی مداری بھی تھا مگر

حیرت ہے پھر بھی کوئی تماشا نہیں ہوا

آنکھیں بجھی بجھی سی ہیں بازو تھکے تھکے

ایسے میں کوئی تیر چلانے کا فائدہ

وہ بے کسی کہ آنکھ کھلی تھی مری مگر

ذوق نظر پہ جبر نے پہرہ بٹھا دیا

غضنفر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1061) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ghazanfar, Apni Nazar Main Bhi Tu Wo Apna Nahi Raha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 19 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ghazanfar.