Phir Yeh Kaesa OdheR Ban Sa Laga

پھر یہ کیسا ادھیڑ بن سا لگا

پھر یہ کیسا ادھیڑ بن سا لگا

جان غم دیدہ کو جو گھن سا لگا

اس گلی میں جو میں اٹھا گاہے

پائے خوابیدہ مجھ کو سن سا لگا

اس نے جس وقت اور سر کھینچا

نخل قد اس کا سرو بن سا لگا

اس کے چھلے کے ہیں جو گل کھائے

داغ ہر اک بدن پہ ہن سا لگا

آخر عمر اپنی نظروں میں

جامۂ زندگی کہن سا لگا

کشتیٔ چشم تر کھنچی ہے ادھر

ہے جدھر تار اشک گن سا لگا

یار دھرماتما کا پیار کے ساتھ

بوسہ دینا بھی مجھ کو پن سا لگا

جب دل سوختہ پہ زخم مژہ

نظر آیا وہ صاف پن سا لگا

میں سنا مصحفیؔ کو پیری میں

مجھ کو خیلے وہ خوش سخن سا لگا

غلام ہمدانی مصحفی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(632) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ghulam Hamdani Mushafi, Phir Yeh Kaesa OdheR Ban Sa Laga in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ghulam Hamdani Mushafi.