Tum Bhi Aao Ge Meray Ghar Jo Sanam Kia Hoga

تم بھی آؤ گے مرے گھر جو صنم کیا ہوگا

تم بھی آؤ گے مرے گھر جو صنم کیا ہوگا

مجھ پر اک رات کروگے جو کرم کیا ہوگا

ایک عالم نے کیا ہے سفر ملک عدم

ہم بھی جاویں گے اگر سوئے عدم کیا ہوگا

دم رخصت ہے مرا آج مری بالیں پر

تم اگر وقفہ کروگے کوئی دم کیا ہوگا

دیکھ اس چاک گریباں کو تو یہ کہتی ہے صبح

جس کا سینہ ہے یہ کچھ اس کا شکم کیا ہوگا

چین ہو جائے گا دل کو مرے از راہ کرم

میری آنکھوں پہ رکھوگے جو قدم کیا ہوگا

صحبت غیر کا انکار تو کرتے ہو ولے

کھاؤگے تم جو مرے سر کی قسم کیا ہوگا

شانہ اک عمر سے کرتا ہے دو وقتی خدمت

تجھ کو معلوم ہے اے دیدۂ نم کیا ہوگا

مصحفیؔ وصل میں اس کے جو موا جاتا ہو

اس پہ ایام جدائی میں ستم کیا ہوگا

غلام ہمدانی مصحفی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1092) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ghulam Hamdani Mushafi, Tum Bhi Aao Ge Meray Ghar Jo Sanam Kia Hoga in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ghulam Hamdani Mushafi.