Adhuri Qurbatoon Ke Khawab Aankhon Ko Dikha Jana

ادھوری قربتوں کے خواب آنکھوں کو دکھا جانا

ادھوری قربتوں کے خواب آنکھوں کو دکھا جانا

ہزاروں دوریوں پر یہ ترا کچھ پاس آ جانا

اداسی کے دھندلکوں کا دماغ و دل پہ چھا جانا

نظر کے سامنے اک گمشدہ منظر کا آ جانا

سنی ہے میں نے اکثر بند دروازوں کی سرگوشی

صدائیں چاہتی ہیں سب کھلی سڑکوں پہ آ جانا

تری یادیں کہ اس طوفان ظلمت میں بھی روشن ہیں

ہوا مشکل ہوا کو ان چراغوں کا بجھا جانا

خلا میں ڈوبتی سی آہٹیں تھیں کچھ جنہیں ہم نے

سفر میں ساتھ رکھا منزلوں کا آسرا جانا

میں تیرے ساتھ ہوں تو اس کی خوشبو کے تعاقب میں

جہاں تک جا سکے اے سر پھری موج ہوا جانا

نظر اس کی بھی اے مخمورؔ دھوکا کھا گئی آخر

وہی تھا آشنا چہرہ جسے نا آشنا جانا

غلام حسین ساجد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(446) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ghulam Hussain Sajid, Adhuri Qurbatoon Ke Khawab Aankhon Ko Dikha Jana in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 88 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ghulam Hussain Sajid.