Nahi Hai Is Neend Ke Nagar Main Abhi Kisi Ko Dimagh Mera

نہیں ہے اس نیند کے نگر میں ابھی کسی کو دماغ میرا

نہیں ہے اس نیند کے نگر میں ابھی کسی کو دماغ میرا

مگر کسی خواب کے سفر میں سپر کریں گے چراغ میرا

صباحت شمع و آئنہ سے ہوئی ہے میری نمود لیکن

ستارہ و آسماں سے باہر کہیں ملے گا سراغ میرا

تڑپ اٹھی ہے کسی نگر میں قیام کرنے سے روح میری

سلگ رہا ہے کسی مسافت کی بے کلی سے دماغ میرا

جراحت وصل نے کھلائے ہیں ظلمت شام میں ستارے

متاع ہجراں کی چاندنی سے بھرا ہوا ہے ایاغ میرا

لپٹ رہی ہے فصیل کی برجیوں سے اک شہر کی نگاہیں

اور ایک دیوار آئینہ پر جھکا ہوا ہے چراغ میرا

یہ کیسی سطح رواں پہ ساجدؔ دھری ہوئی ہے زمین میری

کہ جھومتا ہے کسی ستارے کے سانس لینے سے باغ میرا

غلام حسین ساجد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(379) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ghulam Hussain Sajid, Nahi Hai Is Neend Ke Nagar Main Abhi Kisi Ko Dimagh Mera in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 88 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ghulam Hussain Sajid.