Ghulam Hussain Sajid Poetry, Ghulam Hussain Sajid Shayari

غلام حسین ساجد - Ghulam Hussain Sajid

ملتان

Social Poetry of Ghulam Hussain Sajid - Social Shayari

غلام حسین ساجد کی معاشرتی شاعری

آ گیا ہو نہ کوئی بھیس بدل کر دیکھو

A Gaya Ho Nah Koi Bhais Badal Kar Dekho

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

ادھوری قربتوں کے خواب آنکھوں کو دکھا جانا

Adhuri Qurbatoon Ke Khawab Aankhon Ko Dikha Jana

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

بکھرتے ٹوٹتے لمحوں کو اپنا ہم سفر جانا

Bikharte Tootay Lamhoon Ko Apna Hum Safar Jana

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

صید ہوں روز ازل سے عالم اسباب کا

Saed Hon Roz Azal Se Aalam Asbaab Ka

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

سمجھتے ہیں جو اپنے باپ کی جاگیر مٹی کو

Samajte Hain Jo Apne Baap Ki Jageer Mati Ko

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

سر پر کسی غریب کے ناچار گر پڑے

Sir Par Kisi Ghareeb Ke Nachar Gir Paray

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

قریۂ حیرت میں دل کا مستقر اک خواب ہے

Qarya Herat Main Dil Ka Mstqr Ik Khawab Hai

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

رکا ہوں کس کے وہم میں مرے گمان میں نہیں

Ruka Hon Kis Ke Vaham Main Marey Guman Main Nahi

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

ٹھہرنے کو ہے بستی کے در و دیوار پر پانی

Theharnay Ko Hai Bastii Ke Dar O Deewar Par Pani

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

افق سے آگ اتر آئی ہے مرے گھر بھی

Ufaq Se Aag Utar Aayi Hai Marey Ghar Bhi

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

سواد شہر سے اغماض کرنا چاہتا ہوں

Swad Shehar Se Aghmaz Karna Chahta Hon

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

سسک رہی ہیں تھکی ہوائیں لپٹ کے اونچے صنوبروں سے

Sisak Rahi Hain Thaki Hawae Lapat Ke Ounchay Sanobroon Say

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

صید ہوں روز ازل سے عالم اسباب کا

Saed Hon Roz Azal Se Aalam Asbab Ka

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

سمجھتے ہیں جو اپنے باپ کی جاگیر مٹی کو

Samajte Hain Jo –apne Bap Ki Jageer Matti Ko

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

نمود پاتے ہیں منظروں کی شکست سے فتح کے بہانے

Namood Pate Hain Manazron Ki Shikast Se Fatah Ke Bahanay

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

قریۂ حیرت میں دل کا مستقر اک خواب ہے

Qarya Herat Main Dil Ka Mstqr Ik Khawab Hai

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

نہیں ہے اس نیند کے نگر میں ابھی کسی کو دماغ میرا

Nahi Hai Is Neend Ke Nagar Main Abhi Kisi Ko Dimagh Mera

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

نگار خانہ ارض و سما ملا کہ نہیں

Nigar Khanah Arz O Sama Mila Ke Nahi

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

مری وراثت میں جو بھی کچھ ہے وہ سب اسی دہر کے لیے ہے

Meri Waarsat Main Jo Bhi Ouch Hai Woh Sab Isi Deher Ke Liye Hai

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

نہیں آساں کسی کے واسطے تخمینہ میرا

Nahi Aasan Kisi Ke Wastay Takhmenah Mera

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

نہیں اب روک پائے گی فصیل شہر پانی کو

Nahi Ab Rok Paye Gi Fasel Shehar Pani Ko

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

مل گئی ہے بادیہ پیمائی سے منزل مری

Mil Gayi Hai Badia Pemai Se Manzil Meri

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

مرے نجم خواب کے روبرو کوئی شے نہیں مرے ڈھنگ کی

Marey Najam Khawab Ke Rubaroo Koi Shai Nahi Marey Dhang Ki

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

مری صبح خواب کے شہر پر یہی اک جواز ہے جبر کا

Mari Subah Khawab Ke Sehar Par Yahi Ik Jowaz Hai Jabar Ka

(Ghulam Hussain Sajid) غلام حسین ساجد

Records 1 To 24 (Total 63 Records)

Social Shayari of Ghulam Hussain Sajid - Poetry of Social. Read the best collection of Social poetry by Ghulam Hussain Sajid, Read the famous Social poetry, and Social Shayari by the poet. Social Nazam and Social Ghazals of the poet. The best collection of Shayari by Ghulam Hussain Sajid online. You can also read different types of poetries by the poet including Social Shayari from different books of the poet.