Maatam Deed Hai Deedar Ka Khwahan Hona

ماتم دید ہے دیدار کا خواہاں ہونا

ماتم دید ہے دیدار کا خواہاں ہونا

جس قدر دیکھنا اتنا ہی پشیماں ہونا

سخت دشوار ہے آسان کا آساں ہونا

خون فرصت ہے یہاں سر بہ گریباں ہونا

تیرا دیوانہ تو وحشت کی بھی حد سے نکلا

کہ بیاباں کو بھی چاہے ہے بیاباں ہونا

کوچۂ غیر میں کیوں کر نہ بناؤں گھر کو

میری آبادی سے آباد ہے ویراں ہونا

خاک وحشی سے اگر ربط ہے ٹھوکر کو تری

دور دامن سے نہیں دور گریباں ہونا

نہ وہ خوں ہی ہے جگر میں نہ وہ رونے کا دماغ

مل گیا خاک میں ہر اشک کا طوفاں ہونا

جی کا جی ہی میں رہا حرف تمنا افسوس

کہنا کچھ آپ ہی اور آپ پشیماں ہونا

دل سے انداز شکن زلف نے سب جمع کیے

چھیڑ کر اس کو کہیں تو نہ پریشاں ہونا

تجھ کو ارمان خرابی ہے جو اے دہلی اور

سیکھ جا گھر میں مرے رہ کے بیاباں ہونا

دل ہے اک قطرۂ خوں جس پہ یہ سینہ زوری

کچھ سمجھتا ہی نہیں ہم صف مژگاں ہونا

مجھ میں کچھ تاب ہو اے جاں تو میں بے تاب رہوں

ورنہ دشوار ہے اس راز کا پنہاں ہونا

یاد مژگاں سے ادھر زخم جگر پر کھانا

اور ادھر شورش دل سے نمک افشاں ہونا

آج وہ وقت قلقؔ پر ہے کہ جوں ابن خلیل

غیر تسلیم نہیں قتل کا آساں ہونا

غلام مولیٰ قلق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(391) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of GHULAM MAULA QALAQ, Maatam Deed Hai Deedar Ka Khwahan Hona in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 44 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of GHULAM MAULA QALAQ.