Tairay Waday Ka Ekhtataam Nahi

تیرے وعدے کا اختتام نہیں

تیرے وعدے کا اختتام نہیں

کہ قیامت پہ بھی قیام نہیں

بے وفائی تمہاری عام ہوئی

اب کسی کو کسی سے کام نہیں

کس لیے دعویٔ زلیخائی

غیر یوسف نہیں غلام نہیں

وصل کے بعد ہجر کا کیا کام

دور گردوں کا انتظام نہیں

کون سنتا ہے نالہ و فریاد

چرخ کو خوف انتقام نہیں

خال لب دیکھ کر ہوا معلوم

کوئی دانہ بغیر دام نہیں

آپ میں کیوں کہ آؤں جب کہ تو آئے

خلوت خاص بزم عام نہیں

نالہ کرتا ہوں لوگ سنتے ہیں

آپ سے میرا کچھ کلام نہیں

جس جگہ ہے وہاں بھی ہے بہتان

کہ کسی جا ترا مقام نہیں

روز فرقت کو روز حشر نہ جان

شام پر بھی تو اختتام نہیں

ہے خدا ہی قلقؔ جو آج بجھے

صبح ہوتے نہیں کہ شام نہیں

غلام مولیٰ قلق

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(266) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of GHULAM MAULA QALAQ, Tairay Waday Ka Ekhtataam Nahi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 44 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of GHULAM MAULA QALAQ.