Agay Agay Shar Phelata Jata Hon

آگے آگے شر پھیلاتا جاتا ہوں

آگے آگے شر پھیلاتا جاتا ہوں

پیچھے پیچھے اپنی خیر مناتا ہوں

پتھر کی صورت بے حس ہو جاتا ہوں

کیسی کیسی چوٹیں سہتا رہتا ہوں

آخر اب تک کیوں نہ تمہیں آیا میں نظر

جانے کہاں کہاں تو دیکھا جاتا ہوں

سانسوں کے آنے جانے سے لگتا ہے

اک پل جیتا ہوں تو اک پل مرتا ہوں

دریا بالو مورم ڈھو کر لاتا ہے

میں اس کا سب مال آڑا لے آتا ہوں

اب تو میں ہاتھوں میں پتھر لے کر بھی

آئینے کا سامنا کرتے ڈرتا ہوں

غلام مرتضی راہی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(508) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of GHULAM MURTAZA RAHI, Agay Agay Shar Phelata Jata Hon in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 63 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of GHULAM MURTAZA RAHI.