Oas Pari Thi Raat Bohat Aur Kohra Tha Garmaish Par

اوس پڑی تھی رات بہت اور کہرہ تھا گرمائش پر

اوس پڑی تھی رات بہت اور کہرہ تھا گرمائش پر

سیلی سی خاموشی میں آواز سنی فرمائش پر

فاصلے ہیں بھی اور نہیں بھی ناپا تولا کچھ بھی نہیں

لوگ بضد رہتے ہیں پھر بھی رشتوں کی پیمائش پر

منہ موڑا اور دیکھا کتنی دور کھڑے تھے ہم دونوں

آپ لڑے تھے ہم سے بس اک کروٹ کی گنجائش پر

کاغذ کا اک چاند لگا کر رات اندھیری کھڑکی پر

دل میں کتنے خوش تھے اپنی فرقت کی آرائش پر

دل کا حجرہ کتنی بار اجڑا بھی اور بسایا بھی

ساری عمر کہاں ٹھہرا ہے کوئی ایک رہائش پر

دھوپ اور چھاؤں بانٹ کے تم نے آنگن میں دیوار چنی

کیا اتنا آسان ہے زندہ رہنا اس آسائش پر

شاید تین نجومی میری موت پہ آ کر پہنچیں گے

ایسا ہی اک بار ہوا تھا عیسیٰ کی پیدائش پر

گلزار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1156) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Gulzar, Oas Pari Thi Raat Bohat Aur Kohra Tha Garmaish Par in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 107 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Gulzar.