Hawa Ek Qalam Hai

ہوا ایک قلم ہے

میں نے ہواؤں کا گیت سننا چاہا

مگر سن نہ سکا

گیت بازاری بھاؤ تاؤ سے کتراتے ہیں

اور یہاں وحشت زدہ آوازوں میں سے

ترنم کی علیحدگی کا کوئی بندوبست نہیں

جب میں سویا ہوا تھا

ہوا بھوکے بچوں کی لوری بن گئی تھی

میں ہوا کو معطر محسوس کرنا چاہتا ہوں

مگر یہ ہمیشہ

جھلسی ہوئی لاشیں ڈھونڈ لیتی ہے

یہ تپتی ہوئی لو میں

اور سردیوں کی اداس ٹھٹھرتی ہوئی شام کو

لوگوں کے پھٹے ہوئے کپڑوں میں گھس جاتی ہے

ہوا ایک بہترین خطیب ہے

جب ہم

گرم یا سرد ہونے لگیں

یہ تقدیر کے الفاظ بن کر

ہمارے کانوں میں چھپ جاتی ہے

ہوا ایک قلم ہے

جو پرانی کہانی میں ہر روز نئے کردار گاڑ دیتا ہے

ایچ بی بلوچ

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(156) ووٹ وصول ہوئے

Related Poetry

Your Thoughts and Comments

Hawa Ek Qalam Hai by H B Baloch - Read H B Baloch's best Shayari Hawa Ek Qalam Hai at UrduPoint. Here you can read the best poetry Hawa Ek Qalam Hai of H B Baloch. Hawa Ek Qalam Hai is the most famous poetry by H B Baloch. People love to read poetry by H B Baloch, and Hawa Ek Qalam Hai by H B Baloch is best among the whole collection of poetry by H B Baloch.

H B Baloch is the most famous Urdu Poet. Therefore, people love to read Urdu Poetry of H B Baloch. At UrduPoint, you can find the complete collection of Urdu Poetry of H B Baloch. On this page, you can read Hawa Ek Qalam Hai by H B Baloch. Hawa Ek Qalam Hai is the best poetry by H B Baloch.

Read the H B Baloch's best poetry Hawa Ek Qalam Hai here at UrduPoint; you will surely like it. If we make a list of H B Baloch's best Shayari, Hawa Ek Qalam Hai of H B Baloch will be at the top. Many people, who love the Urdu Shayari of H B Baloch, regard it as the best poetry Hawa Ek Qalam Hai of H B Baloch.

We recommend you read the most famous poetry, Hawa Ek Qalam Hai of H B Baloch here, you will surely love it. Also, don't forget to share it with others.