Khizaan Naseeb Ki Hasrat Baroye Kar Na Ho

خزاں نصیب کی حسرت بروئے کار نہ ہو

خزاں نصیب کی حسرت بروئے کار نہ ہو

بہار شعبدۂ چشم انتظار نہ ہو

فریب خوردۂ الفت سے پوچھئے کیا ہے

وہ ایک عہد محبت کہ استوار نہ ہو

نظر کو تاب نظارہ نہ دل کو جرأت دید

جمال یار سے یوں کوئی شرمسار نہ ہو

قبا دریدہ و دامان و آستیں خونیں

گلوں کے بھیس میں یہ کوئی دل فگار نہ ہو

نہ ہو سکے گا وہ رمز آشنائے کیف حیات

جو قلب چشم تغافل کا رازدار نہ ہو

طریق عشق پہ ہنستی تو ہے خرد لیکن

یہ گمرہی کہیں منزل سے ہمکنار نہ ہو

نہ طعنہ زن ہو کوئی اہل ہوش مستوں پر

کہ زعم ہوش بھی اک عالم خمار نہ ہو

وہ کیا بتائے کہ کیا شے امید ہوتی ہے

جسے نصیب کبھی شام انتظار نہ ہو

یہ چشم لطف مبارک مگر دل ناداں

پیام عشوۂ رنگیں صلائے دار نہ ہو

کسی کے لب پہ جو آئے نوید زیست بنے

وہی حدیث وفا جس پہ اعتبار نہ ہو

جو دو جہان بھی مانگے تو میں نے کیا مانگا

وہ کیا طلب جو بقدر عطائے یار نہ ہو

حبیب احمد صدیقی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(849) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Habeeb Ahmad Siddiqui, Khizaan Naseeb Ki Hasrat Baroye Kar Na Ho in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 12 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Habeeb Ahmad Siddiqui.