Falak Ki Gardishen Aisi Nahi Jin Mein Qadam Thehray

فلک کی گردشیں ایسی نہیں جن میں قدم ٹھہرے

فلک کی گردشیں ایسی نہیں جن میں قدم ٹھہرے

سکوں دشوار ہے کیوں کر طبیعت کوئی دم ٹھہرے

قضا نے دوستوں سے دیکھیے آخر کیا نادم

کئے تھے عہد و پیماں جس قدر وہ کل عدم ٹھہرے

چھوا تو نے جسے مارا اسے اے افعئ گیسو

یہ سب تریاق میرے تجربہ کرنے میں سم ٹھہرے

کیا جب غور کوسوں دور نکلی منزل مقصد

کبھی گر پائے شل اٹھے تو چل کر دو قدم ٹھہرے

لگا کر دل جدا ہونا نہ تھی شرط وفا صاحب

غم فرقت کی شدت سے کرم جور و ستم ٹھہرے

جو کچھ دیکھا وہ آئینہ تھا آنے والی حالت کا

جہاں دیکھا یہی آنکھوں کے کانسے جام جم ٹھہرے

عمل کہنے پہ اپنے حضرت واعظ کریں پہلے

گنہ کے معترف جب ہیں تو وہ کب محترم ٹھہرے

جوانی کی سیہ مستی میں وصف زلف لکھا تھا

بڑھا وہ سلسلہ ایسا کہ ہم مشکیں قلم ٹھہرے

یہ ثابت ہے کہ مطلق کا تعین ہو نہیں سکتا

وہ سالک ہی نہیں جو چل کے تا دیر و حرم ٹھہرے

بشر کو قید کلفت مایۂ اندوہ و آفت ہے

رہے اچھے جو اس مہماں سرا میں آ کے کم ٹھہرے

حبیبؔ ناتواں سے راہ الفت طے نہیں ہوتی

عجب کیا گر یہ رستہ جادۂ ملک عدم ٹھہرے

حبیب موسوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(244) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Habeeb Musvi, Falak Ki Gardishen Aisi Nahi Jin Mein Qadam Thehray in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Habeeb Musvi.