Mohar O Ulfat Se Mall Tahazeeb

مہر و الفت سے مآل تہذیب

مہر و الفت سے مآل تہذیب

خاکساری ہے کمال تہذیب

ہے وہ آرائش حسن باطن

جس کو کہتے ہیں جمال تہذیب

کم نہیں مردمک چشم سے کچھ

رخ انسان پہ خال تہذیب

آج کل ہم میں اگر سچ پوچھو

شکل عنقا ہے مثال تہذیب

کبھی ہوتا نہیں بد وضع کا خوف

ہے عجب جاہ و جلال تہذیب

رخ پہ کرتا ہے متانت پیدا

دل میں آتے ہی خیال تہذیب

اپنے مطلب کا جہاں کچھ ہو لگاؤ

نہیں رہتا ہے خیال تہذیب

قوم کا اپنے نہ گھٹتا وہ عروج

ہو نہ جاتا جو زوال تہذیب

جام جم سے ہے کہیں پر تمکیں

بزم خلت میں سفال تہذیب

اس کا خوں کرتے ہیں جو ناحق کوش

ان کی گردن پہ وبال تہذیب

مردہ قوموں کے لئے آب حیات

بنتا جاتا ہے زلال تہذیب

بدر بن جائے گا چندے میں حبیبؔ

حق نے چاہا تو ہلال تہذیب

حبیب موسوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(463) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Habeeb Musvi, Mohar O Ulfat Se Mall Tahazeeb in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Habeeb Musvi.