Ab Teri Zaroorat Bhi Bohat Kam Hai Meri Jaan

اب تیری ضرورت بھی بہت کم ہے مری جاں

اب تیری ضرورت بھی بہت کم ہے مری جاں

اب شوق کا کچھ اور ہی عالم ہے مری جاں

اب تذکرۂ خندۂ گل بار ہے جی پر

جاں وقف غم گریہ شبنم ہے مری جاں

رخ پر ترے بکھری ہوئی یہ زلف سیہ تاب

تصویر پریشانئ عالم ہے مری جاں

یہ کیا کہ تجھے بھی ہے زمانے سے شکایت

یہ کیا کہ تری آنکھ بھی پر نم ہے مری جاں

ہم سادہ دلوں پر یہ شب غم کا تسلط

مایوس نہ ہو اور کوئی دم ہے مری جاں

یہ تیری توجہ کا ہے اعجاز کہ مجھ سے

ہر شخص ترے شہر کا برہم ہے مری جاں

اے نزہت مہتاب ترا غم ہے مری زیست

اے نازش خورشید ترا غم ہے مری جاں

حبیب جالب

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2587) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Habib Jalib, Ab Teri Zaroorat Bhi Bohat Kam Hai Meri Jaan in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 76 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Habib Jalib.