Bas Ik Shua Noor Se Saya Simat Gaya

بس اک شعاع نور سے سایہ سمٹ گیا

بس اک شعاع نور سے سایہ سمٹ گیا

وہ پاس آ رہا تھا کہ میں دور ہٹ گیا

پھر درمیان عقل و جنوں جنگ چھڑ گئی

پھر مجمع خواص گروہوں میں بٹ گیا

کیا اب بھی تیری خاطر نازک پہ بار ہوں

پتھر نہیں کہ میں ترے رستے سے ہٹ گیا

یا اتنا سخت جان کہ تلوار بے اثر

یا اتنا نرم دل کہ رگ گل سے کٹ گیا

وہ لمحۂ شعور جسے جاں کنی کہیں

چہرے سے زندگی کی نقابیں الٹ گیا

اب کون جائے کوئے ملامت سے لوٹ کر

قدموں سے آ کے اپنا ہی سایہ لپٹ گیا

آخر شکیبؔ خوئے ستم اس نے چھوڑ دی

ذوق سفر کو دیکھ کے صحرا سمٹ گیا

حبیب جالب

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2644) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Habib Jalib, Bas Ik Shua Noor Se Saya Simat Gaya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 76 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Habib Jalib.