Tray Mathey Pay Jab Tak Bal Raha Hai

ترے ماتھے پہ جب تک بل رہا ہے

ترے ماتھے پہ جب تک بل رہا ہے

اجالا آنکھ سے اوجھل رہا ہے

سماتے کیا نظر میں چاند تارے

تصور میں ترا آنچل رہا ہے

تری شان تغافل کو خبر کیا

کوئی تیرے لیے بے کل رہا ہے

شکایت ہے غم دوراں کو مجھ سے

کہ دل میں کیوں ترا غم پل رہا ہے

تعجب ہے ستم کی آندھیوں میں

چراغ دل ابھی تک جل رہا ہے

لہو روئیں گی مغرب کی فضائیں

بڑی تیزی سے سورج ڈھل رہا ہے

زمانہ تھک گیا جالبؔ ہی تنہا

وفا کے راستے پر چل رہا ہے

حبیب جالب

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(3255) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Habib Jalib, Tray Mathey Pay Jab Tak Bal Raha Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 76 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Habib Jalib.