Pehlay To Shehar Bhar Mein Andhera Kya Gaya

پہلے تو شہر بھر میں اندھیرا کیا گیا

پہلے تو شہر بھر میں اندھیرا کیا گیا

پھر ہم سے روشنی کا تقاضا کیا گیا

پہلے تو سازشوں سے ہمیں دی گئی شکست

پھر خوب اس شکست کا چرچا کیا گیا

اک شخص کے لیے مری بستی کا راستہ

کچے مکاں گرا کے کشادہ کیا گیا

پہلے تو مجھ کو راہ بتائی گئی غلط

پھر میری گمرہی کا تماشا کیا گیا

دنیا نہ تھی جو پیار کے قابل تو کس لیے

ہم کو اسیر خواہش دنیا کیا گیا

اس گلشن حیات میں رنگ خزاں کے ساتھ

اک موسم بہار بھی پیدا کیا گیا

آنکھوں کو آنسوؤں کے جواہر دئے گئے

دل کے سپرد غم کا خزانہ کیا گیا

دنیا ہمارے قتل کو کہتی ہے خود کشی

مرنے کے بعد بھی ہمیں رسوا کیا گیا

شاہدؔ لکھا گیا تھا ہمارے ہی خون سے

تصنیف جب وفا کا صحیفہ کیا گیا

حفیظ شاہد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2300) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of HAFEEZ SHAHID, Pehlay To Shehar Bhar Mein Andhera Kya Gaya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 35 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of HAFEEZ SHAHID.