Khamosh Ankhoon Se Karta Raha Sawal Mujhe

خموش آنکھوں سے کرتا رہا سوال مجھے

خموش آنکھوں سے کرتا رہا سوال مجھے

وہ آ کے کہہ نہ سکا اپنے دل کا حال مجھے

کبھی تو خود کو بھی پہچاننے کی کوشش کر

حصار ذات سے آ کر کبھی نکال مجھے

یہ بے یقینی کا گہرا سکوت تو ٹوٹے

فریب دے کوئی خوش فہمیوں میں ڈال مجھے

وہ نام لکھوں تو لفظوں سے خوشبوئیں اٹھیں

وہ دے گیا جو مہکتے ہوئے خیال مجھے

گئے زمانے لئے پھر وہ آ گیا حیدرؔ

بکھر نہ جاؤں کہیں پھر ذرا سنبھال مجھے

حیدرقریشی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1763) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Haider Qureshi, Khamosh Ankhoon Se Karta Raha Sawal Mujhe in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 25 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Haider Qureshi.