Ankhoon Ne Haal Keh Diya Hont Na Phir Hila Sake

آنکھوں نے حال کہہ دیا ہونٹ نہ پھر ہلا سکے

آنکھوں نے حال کہہ دیا ہونٹ نہ پھر ہلا سکے

دل میں ہزار زخم تھے جو نہ انہیں دکھا سکے

گھر میں جو اک چراغ تھا تم نے اسے بجھا دیا

کوئی کبھی چراغ ہم گھر میں نہ پھر جلا سکے

شکوہ نہیں ہے عرض ہے ممکن اگر ہو آپ سے

دیجے مجھ کو غم ضرور دل جو مرا اٹھا سکے

وقت قریب آ گیا حال عجیب ہو گیا

ایسے میں تیرا نام ہم پھر بھی نہ لب پہ لا سکے

اس نے بھلا کے آپ کو نظروں سے بھی گرا دیا

ناصر خستہ حال پھر کیوں نہ اسے بھلا سکے

حکیم ناصر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(729) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hakeem Nasir, Ankhoon Ne Haal Keh Diya Hont Na Phir Hila Sake in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 10 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hakeem Nasir.