Ee Dost Kahin Tujh Pey Bhi Ilzaam Na Aaye

اے دوست کہیں تجھ پہ بھی الزام نہ آئے

اے دوست کہیں تجھ پہ بھی الزام نہ آئے

اس میری تباہی میں ترا نام نہ آئے

یہ درد ہے ہمدم اسی ظالم کی نشانی

دے مجھ کو دوا ایسی کہ آرام نہ آئے

کاندھے پہ اٹھائے ہیں ستم راہ وفا کے

شکوہ مجھے تم سے ہے کہ دو گام نہ آئے

لگتا ہے کہ پھیلے گی شب غم کی سیاہی

آنسو مری پلکوں پہ سر شام نہ آئے

میں بیٹھ کے پیتا رہوں بس تیری نظر سے

ہاتھوں میں کبھی میرے کوئی جام نہ آئے

بیٹھا ہوں دیا گھر کا جو ناصرؔ میں جلا کے

ایسا نہ ہو پھر وہ دل ناکام نہ آئے

حکیم ناصر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(770) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hakeem Nasir, Ee Dost Kahin Tujh Pey Bhi Ilzaam Na Aaye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 10 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hakeem Nasir.