Iss Rah E Mohabbat Main Tu Azar Milley Hain

اس راہ محبت میں تو آزار ملے ہیں

اس راہ محبت میں تو آزار ملے ہیں

پھولوں کی تمنا تھی مگر خار ملے ہیں

انمول جو انساں تھا وہ کوڑی میں بکا ہے

دنیا کے کئی ایسے بھی بازار ملے ہیں

جس نے بھی مجھے دیکھا ہے پتھر سے نوازا

وہ کون ہیں پھولوں کے جنہیں ہار ملے ہیں

مالک یہ دیا آج ہواؤں سے بچانا

موسم ہے عجب آندھی کے آثار ملے ہیں

دنیا میں فقط ایک زلیخا ہی نہیں تھی

ہر یوسف ثانی کے خریدار ملے ہیں

اب ان کے نہ ملنے کی شکایت نہ گلہ ہے

ہم جب بھی ملے خود سے تو بے زار ملے ہیں

ناصرؔ یہ تمنا تھی محبت سے ملیں گے

وہ جب بھی ملے بر سر پیکار ملے ہیں

حکیم ناصر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(714) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hakeem Nasir, Iss Rah E Mohabbat Main Tu Azar Milley Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 10 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hakeem Nasir.