Kaam Asaan Hia Magar Dekhiye Dushwar Bhi Hai

کام آساں ہے مگر دیکھیے دشوار بھی ہے

کام آساں ہے مگر دیکھیے دشوار بھی ہے

آگے دروازے کے رکھی ہوئی دیوار بھی ہے

دینے والے سے مجھے کوئی شکایت کیوں ہے

راہ میں دھوپ بھی ہے سایۂ اشجار بھی ہے

قتل کر کے جو مجھے سائے میں پھینک آیا ہے

لوگ کہتے ہیں وہی میرا طرفدار بھی ہے

تجھ کو بس اپنی ہی تصویر نظر آتی ہے

آئنہ میں کہیں حیرت کہیں زنگار بھی ہے

کیوں بھلا وقت کا نقصان کرو گے پیارے

جو یہاں اب ہے تماشا وہی اس پار بھی ہے

میرے آبا سے مجھے کیا نہ ملا ہے ہمدمؔ

طاق میں دیکھیے مصحف بھی ہے تلوار بھی ہے

ہمدم کاشمیری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(475) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hamdam Kashmiri, Kaam Asaan Hia Magar Dekhiye Dushwar Bhi Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 26 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hamdam Kashmiri.