Judaiyoon K Taswar Hi Sey Rulaoon Isse

جدائیوں کے تصور ہی سے رلاؤں اسے

جدائیوں کے تصور ہی سے رلاؤں اسے

میں جھوٹ موٹ کا قصہ کوئی سناؤں اسے

اسے یقین ہے کتنا مری وفاؤں کا

خلاف اپنے کسی روز ورغلاؤں اسے

وہ تپتی دھوپ میں بھی ساتھ میرے آئے گا

مگر میں چاندنی راتوں میں آزماؤں اسے

غموں کے صحرا میں پھرتا رہوں اسے لے کر

اداسیوں کے سمندر میں ساتھ لاؤں اسے

مزہ تو جب ہے اسے بھیڑ میں کہیں کھو دوں

پھر اس کے بعد کہیں سے میں ڈھونڈ لاؤں اسے

یہ کیا کہ روز وہی سوچ پر مسلط ہو

کبھی تو ایسا ہو کچھ دیر بھول جاؤں اسے

کچھ اور خواب بھی اس سے چھپا کے دیکھے ہیں

کچھ اور چہرے نگاہوں میں ہیں دکھاؤں اسے

وہ گیلی مٹی کی مانند ہے مگر حامدؔ

ضروری کیا ہے کہ اپنا ہی سا بناؤں اسے

حامد اقبال صدیقی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(470) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hamid Iqbal Siddiqui, Judaiyoon K Taswar Hi Sey Rulaoon Isse in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hamid Iqbal Siddiqui.